Aisay Na Thay by Aitbaar Sajid - Urdu Poetry

Aisay Na Thay Hum Ehl-e-Dil Picture Aisay Na Thay Hum Ehl-e-Dil

Aisay Naa Thay Hum Ehl e Dil, Itne Kahan Kharab Thay
Hum Bhi Kisi Ki Aas Thay, Hum Bhi Kisi Ka Khuwab Thay

ایسے نہ تھے ہم اہلِ دل، اتنے کہاں خراب تھے
ہم بھی کسی کی آس تھے، ہم بھی کسی کا خواب تھے

Dil Pe Kisi Ke Naqsh Thay Soorat Hirf e Aarzoo
Uski Kitaab e Zeest Mein Laaiq e Intisaab Thay

دِل پہ کسی کے نقش تھے صورت حِرف آرزو
اس کی کتابِ زیست میں لائقِ انتساب تھے

Waadon Ka Aik Shehar Tha Jis Se Guzar Rahy Thay Hum
Aankhen Khulein To Door Tak, Har Su Wohi Sarab Thay

وعدوں کا ایک شہر تھا جس سے گزر رہے تھے ہم
آنکھیں کھلیں تو دور تک، ہر سو وہی سراب تھے

Tujh Se Bichar Ke Gul Sara Chaman Tha Saug Mein
Noha Ba Lab The Har Kuli, Giriya Kunan Gulab Thay

تجھ سے بچھڑ کے گُل سارا چمن تھا سوگ میں
نوحہ بہ لب تھی ہر کلی، گریہ کناں گلاب تھے

Dil Sa Chirag Kia Bujha, Ankhen Dhuwan Huein
Kehny Ko Apnay Aas Paas Kitne He Mahtaab Thay

دِل سا چراغ کیا بجھا، آنکھیں دُھواں ہوئیں
کہنے کو اپنے آس پاس کتنے ہی ماہتاب تھے